Our Blog

شریعہ آڈٹ کیا ہوتا ہے؟

 

شریعہ آڈٹ ایسے عمل کو کہا جاتا ہے کہ جس کے ذریعہ کاروبار میں ہونے والی تمام سرگرمیوں کو اسلامی اصول ِ تجارت کے مطابق پرکھنا اور اُن کا تجزیہ کرنا تا کہ غیر شرعی امور کی نشاندہی ہوسکے۔ قیامت کے دن انسان کو نامہ اعمال دیتے وقت کہا جائے گا :

اقراء کتابک کفی بنفسک الیوم حسیبا (الایۃ)

اپنی کتاب پڑھ لے تو آج اپنا ہی محاسب (آڈٹ کرنے والا)کافی ہے ۔

نگرانی اور جانچ پڑتال کا یہ عمل اسلام میں بہت اہمیت رکھتا ہے۔خلافتِ عباسیہ کے ایک وزیر علی بن عیسی نے اِس عمل کی اہمیت کے بارے میں کہا تھا : “اگر ہم چھوٹی چھوٹی چیزوں کی جانچ پڑتال نہ کریں تو بڑی بڑی چیزیں ہم سے ضائع ہوجائیں گی ۔ اور یہ جانچ پڑتال ایسی امانت ہے جسے چھوٹے کاموں میں ادا کرنا بھی ضروری ہے ۔ اور بڑے کاموں میں بھی ۔ اِس کا فائدہ یہ ہے کہ ہم سے معاملہ کرنے والوں کو جب یہ معلوم ہوگا کہ ہم ان امور کا اتنا اہتمام کرتے ہیں وہ خود ہم سے امانت داری سے پیش آئیں گے اور خیانت کرنے سے خائف ہوا کریں گے ۔ نیز وہ فرماتے ہیں چھوٹی چھوٹی چیزوں میں جانچ پڑتال کو ترک کرنا اندرونی طور پر بڑی مشکلات میں ڈال دیتا ہے اور بیرونی معاملات میں جانچ پڑتال معاملات کرنے والے کے اعتماد کا سبب ہوتی ہے ۔” خلافتِ عباسیہ میں ایک ادارہ بیرونی معاملات کی جانچ پڑتال کے لئے قائم کیا گیا تھا ، جس کا نام تھا ” زمام الازمۃ”۔

آج کل کے دور میں مالی بحران کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ نگرانی اور جانچ پڑتال کے جن اصولوں کی اسلام نے دعوت و ترغیب دی ہے ، اُن اصولوں سے پہلوتہی کی گئی ہے اور یہ غفلت سرمایہ کاروں کے اعتماد کے ختم کررہی ہے ۔

شریعہ آڈٹ کا عمل ہر کاروباری ادارے کے لئے اس لئے لازم ہے کہ وہ تجارت کو صحیح اسلامی اصولوں کے مطابق ڈھالنے میں معاون ہوتا ہے۔ شریعہ آڈٹ کا عمل ایک تاجر کو صحیح معنوں میں ایک مسلمان تاجر بننے میں اپنا کردار ادا کرتا ہے۔ شریعہ آڈٹ کا عمل کافی عرصہ پرانا ہے بلکہ فتاوی بزازیہ کے بقول ابتدائی زمانے میں ہر تاجر اپنے ساتھ ایک عالمِ دین کو ساتھ رکھتے تھے جو اُن کے کاروباری معاملات کو دیکھا کرتے تھے اور اُن معاملات میں پائی جانے والی خرابیوں اور نقائص کو شریعہ کے اصولوں کے مطابق پرکھ کر متبادل بہتر حل پیش کیا کرتے تھے۔ آج کے اِ س ماڈرن دور میں کاروباری ادارے اپنی بہتری اور نفع کے اضافے کے لئے مختلف اقدامات کرتے ہیں لیکن پھر بھی اپنے مطلوبہ اھداف حاصل نہیں کرپاتے۔ اس کے اسباب میں ایک سبب یہ بھی ہے کہ ہماری تجارت میں بہت سے ایسے اقدامات کیے جاتے ہیں جو کہ اخلاقیات، قوانین اور شریعہ کے مسلمہ اصولوں کے بالکل مخالف ہوتے ہیں ۔شریعہ آڈٹ ہمیں ایسے ہی خامیوں کی طرف متوجہ کرتا ہے ۔ شریعہ آڈٹ ہمیں ایسے نقائص دور کرنے میں ہمت افزائی کرتا ہے۔شریعہ آڈٹ کاروبار کے ایک ایک عمل کی نگرانی کرتا ہے اور کاروبار کو صحیح سمت میں جاری رکھتا ہے۔ شریعہ آڈٹ کی بدولت انسان کا سرمایہ محفوظ ہوجاتا ہے اور اُس محفوظ شدہ سرمایے سے زیادہ سے زیادہ نفع کمایا جا سکتا ہے۔

شریعہ آڈٹ کیسے کیا جاتا ہے؟

کسی بھی ادارے کے شریعہ آڈٹ کے لئے ضروری ہے کہ اُس ادارے کے مالک، سینئر مینجمنٹ اور دیگر اہم افراد کو اِ س عمل کی اہمیت کے بارے میں بتایا جائے کہ یہ عمل آپ کے ادارے کے لئے کتنا ضروری ہے۔ شریعہ آڈٹ سے آپ کے کاروبار کو کیا کیا فائدہ ہوگا ۔شریعہ آڈٹ کا کیا طریقہ کار ہوگا ۔ اس کے بعد کسی ایک شعبے کا انتخاب کرکے اُس شعبے کی پالیسیوں کامطالعہ کیا جاتا ہے ۔ اُن پالیسیوں میں غیر شرعی امور کی نشاندہی کی جاتی ہے۔ مثلاََ مارکیٹنگ کے شعبہ میں ایڈورٹائزنگ میں کیا کیا خرابیاں پائی جاتی ہیں۔ اشتہار بناتے ہوئے کن جائز حدود کا خیال رکھنا ضروری ہے۔جائز اشتہارات اور ناجائز اشتہارات میں کیا کیا فرق پائے جاتے ہیں ۔ دنیا میں اِس حوالے سے کیا ریسرچ ہورہی ہے۔ شریعہ میں اشتہارات کی کیا اہمیت ہے ۔ اگر اشتہارات میں کوئی غیر شرعی خرابی پائی گئی ہے تو اُس کو کیسے درست کیا جائے گا ۔ اُس کا کیا حل ہوگا ۔

اگر اشتہارات بنانے ہیں تو کس طرح مقصد حاصل کرنا ہے۔ شریعہ میں اشتہارات میں کیا باتیں کرنا ضروری ہیں ۔ اگر کسی آدمی سے مارکیٹنگ کروانی ہے تو اُس کی جائز صورتیں کیا ہوں گی ۔ ای مارکیٹنگ کا اسلام میں کیا تصور ہے۔ سوشل میڈیا پر مارکیٹنگ کے حوالے سے شریعہ میں کیا راہنمائی ہے۔ اسی طرح دیگر طرح دیگر شعبوں میں بھی یہ عمل کیا جائے گا اور ان شوبوں کے مسائل کو شریعہ کے اصولوں کے مطابق حل کیا جائے گا ۔

شریعہ آڈٹ آپ کو کاروبار میں نفع کے حصول کے ساتھ ساتھ دلی اطمینان بھی نصیب کرتا ہے اور آپ کے کاروبار کو مزید ترقی حاصل کرنے کے مواقع بھی فراہم کرتا ہے۔

Tags:

This is a unique website which will require a more modern browser to work! Please upgrade today!